The news is by your side.

کیا برطانوی شاہی خاندان کی رنجشیں اب ختم ہو جائیں گی؟

ملکہ الزبتھ دوم کے انتقال کے بعد یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ اب شہزادہ ہیری اور ان کی اہلیہ میگھن مارکل اور شاہی خاندان کے درمیان رنجشیں ختم ہونے کے امکانات ہیں۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق شہزادہ ہیری و میگھن کی ہفتے کے روز ونڈزر کیسل میں شہزادہ ولیم اور شہزادی کیٹ کے ساتھ ملاقات ہوئی تھی، اور 2020 کے بعد انھیں پہلی بار ساتھ دیکھا گیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ملکہ کے انتقال کے موقع پر سب نے سوگوار سیاہ لباس زیب تن کر رکھا تھا، دونوں شہزادوں اور ان کی بیویوں نے ایک ساتھ کیمروں کا سامنا کیا، اور محل کے باہر عوام کی جانب سے رکھے گئے پھولوں کو ایک ساتھ دیکھا تھا۔

اب اس سب کو بری طرح سے ٹوٹے ہوئے تعلقات کو ٹھیک کرنے میں پیش رفت کی علامت کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ تاہم اس سے قبل جمعرات کو دونوں بھائی الگ الگ آئے تھے، 37 سالہ ہیری پُرنم آنکھوں سے اکیلے گاڑی میں بالمورل سٹیٹ پہنچے تھے۔

ملکہ الزبتھ کے انتقال کے بعد نئے بادشاہ کون بن گئے؟

شاہی ماہر رچرڈ فٹز ویلیمز کا کہنا ہے کہ ملکہ الزبتھ دوم کے انتقال کے بعد شاہی خاندان کے درمیان مفاہمت کے امکانات روشن دکھائی دے رہے ہیں۔ تاہم شاہی ماہر ہیری اور میگھن کو شاہی خاندان کو نقصان پہنچانے کے لیے ذمہ دار بھی سمجھتے ہیں۔

یاد رہے کہ ہیری نے امریکی ٹی وی شو کی میزبان اوپرا ونفرے کے سامنے یہ دعویٰ کیا تھا کہ ان کے بھائی اور والد بادشاہت میں ’پھنسے‘ ہوئے ہیں۔

دوسری طرف جب چارلس برطانیہ کے نئے بادشاہ کے طور پر اپنی پہلی تقریر کر رہے تھے، تو وہ اپنے خود ساختہ جلا وطن بیٹے کے ساتھ صلح کرنے کے لیے تیار نظر آئے۔

واضح رہے کہ ہیری اور میگھن نے جنوری 2020 میں اچانک شاہی خاندان سے علیحدگی کا اعلان کیا تھا، اس کے بعد شاہی جوڑا اعزازی فوجی تقرریوں اور شاہی سرپرستی سے بھی دست بردار ہو گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں