The news is by your side.

Advertisement

یوگی حکومت سے مایوس کسان پھندے پر جھول گیا

نئی دہلی: اتر پردیش کے وزیرِ اعلیٰ یوگی ادتیہ ناتھ کی ناقص پالیسیوں سے دل برداشتہ کسان نے موت کو گلے لگالیا ہے۔

بھارتی میڈیا رپورٹ کے مطابق پچپن سالہ کسان جس کا نام پرتاپ سنگھ بتایا جاتا ہے، اس پر ڈھائی لاکھ روپے قرض واجب الادا تھے، جو معاشی حالات کے باعث یہ قرض ادا کرنے سے قاصر تھا، آج اس نے مبینہ طور پر پھانسی لگا کر اپنی زندگی ختم کر لی۔

ظریف نگر تھانہ کے ایس ایچ او کے مطابق کسان پیر کے روز اپنے گھر سے نکلا تھا اور پھر بعد میں اس کی لاش گاؤں کے باہر ایک درخت سے لٹکی برآمد ہوئی، مبینہ طور پر خودکشی کے لئے اسن نے بیلوں کو باندھنے والی رسی کا استعمال کیا جبکہ حال ہی میں اس نے اپنی بیوی کے علاج اور اپنے قرض کے حصے کی ادائیگی کرنے کے لیے اپنے بیل فروخت کر دیئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں: بھارتی کسان کی خودکشی، بی جے پی کو ووٹ نہ دینے کی وصیت

ایس ایچ او نے پرتاپ کی فیملی کے حوالے سے بتایا کہ وہ بقایہ قرض کے سبب پریشان تھا اور اسے کھیتی میں نقصان ہوا تھا اور اسے اپنی زندگی پٹری پر لوٹنے کی کوئی امید دکھائی نہیں دے رہی تھی۔

مبینہ خود کشی کے بعد پرتاب سنگھ کے اہل خانہ نے کسی بھی قسم کی قانونی کارروائی سے انکار کردیا ہے جبکہ ضابطے کی کارروائی کے بعد لاش کو ورثا کے حوالے کردیا گیا ہے۔

ایک محتاط اندازے کے مطابق سال دوہزار بارہ سے لیکر اب تک چھ ہزار سے زائد کسان اپنی زندگیوں کا خاتمہ کرچکے ہیں، بھارتی کسانوں کی خودکشی کی اہم وجہ حکومتی قرض اور اس سے متعلقہ پالیسی قرار دی جارہی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں